Slider[Style1]

Style2

Style3[OneLeft]

Style3[OneRight]

Style4

Style5



بہاولپور نیوز: ارسلاؔن مشتاق(شیخوپُورہ)،شارون مسیح(بوریوالہ) قتل کیس اوردِیگراور قومی اسمبلی میں کیپٹن صفدر کی اقلیت مخالف تقریر اور اُسکے بعد سوشل میڈیا پر اِسی حولے سے وائرل ویڈیو جس میں مسیحیوں اور احمدیوں کے یار کو غدارکہا گیا ہے، پاکستانی اقلیتوں کیلئے تشویش ناک ہیں۔ اِن خیالات کا اِظہار دِی رائیٹ ریورنڈ(پادری) ارسلاؔن اُلحق، پادری ظفر اِقبال، پادری ظہیر کامران، پادری مقصود غنی، پادری ارشد رحمت، پادری منیر مسیح، پادری ارشد باغیچہ، کرامت مسیح اور چرچ کے دیگرکارکنان نے کیا۔اُنہوں نے مطالبہ کیا کہ حکومت پاکستا ن حسب ِ معمول صرف میڈیا بیانات اور ٹیوٹز سے اقلیتوں کو مطمئن کرنے کی کوشش نہ کرے بلکہ سنجیدہ عملی اِقدامات عمل میں لائے۔ سکولز میں اقلیتی طلباء کے ساتھ بڑھتا ہوا مذہبی رحجان اور اِسکے پسِ پشت شرپسند عناصر کے خلاف سخت کاروائی کی جائے۔ پاکستان کے مسیحی سکولز میں مُسلم طلباء وطالبات بھی تعلیم حاصل کرتے رہے ہیں اور کررہے ہیں کیاکبھی اُنکے ساتھ ایسا برتاؤ یا رویہ رواء رکھا گیا ہے جیسا ارسلانؔ مشتاق (شیخورہ)اور شارون مسیح(بوریوالہ) کے ساتھ کیاگیا ہے۔ اگر ایسے واقعات پر روک تھام نہ لگائی گئی تو مستقبل قریب میں حالات سنورنے کی بجائے مزید بگڑیں گے اور اِقلیتیں اپنے آپ کو مزید غیرمحفوظ متصور کرینگی۔ ہم یہاں سیکڑوں یا ہزاروں میں نہیں بلکہ لاکھوں میں ہیں۔ اور مزید اُنہوں نے کہا کہ حکومت صرف چند گِنے چُنے(لاعلم) لوگوں کو بُلا کر اقلیتوں بالخصوص مسیحیوں کی مذہبی تعلیمات و روایات، تہواروں، چرچز اور اُنکی سیکیورٹی کے حوالے سے بات چیت کرکے جملہء پاکستانی مسیحیوں کی دِل آزاری نہ کرے۔

About STV STAFF

A Responsible Team of Christian Authors, Bloggers, Journalists and News Reporters..
«
Next
Newer Post
»
Previous
Older Post

Top